21-Jul-2019 /18- Dhū al-Qa‘dah-1440

Question # 7248


بچے دو ہی اچھے کی شرعی حیثیت

baji agr bivi mazid olad ki khwahishmnd ho do bachon k bad aur shohar na maney to kya krna chaheye...jb iskey gunah se unhe agah karein aur wo ye daleel dein k jis aurat ki sehat theek na ho kmzor ho boht to phir gunah nhi milta

Category: Allowed and Prohibited Matters / Pragnancy - Asked By: ام عبداللہ - Date: Jan 30, 2019



Answer:


الجواب باسم ملھم الصواب حامدا و مصلیا
اگر تو شوھر کسی شرعی عذر کی وجہ سے مناسب وقفہ ڈالنا چاھے ،جیسے ماں کی صحت،تو اس کی گنجائش ھے ۔
البتہ اگر شوھر دو بچوں کے بعد مزید بچوں کی خواھش ھی نہیں کرتا کہ کبھی بھی نہیں کرنا جیسے رزق کی تنگی وغیرہ کے خوف سے تو یہ جائز نہیں اور سخت گناہ ھے۔
بیوی کو چاھئے کہ اس،مسئلہ سے اس کو آگاہ کر کے بار بار سمجھائے ۔
أخذ في النهر من هذا ومما قدمه الشارح عن الخانية والكمال أنه يجوز لها سد فم رحمها كما تفعله النساء مخالفا لما بحثه في البحر من أنه ينبغي أن يكون حراما بغير إذن الزوج قياسا على عزله بغير إذنها.
قلت: لكن في البزازية أن له منع امرأته عن العزل. اهـ. نعم النظر إلى فساد الزمان يفيد الجواز من الجانبين. فما في البحر مبني على ما هو أصل المذهب، وما في النهر على ما قاله المشايخ، واللہ الموفق.(رد المحتار علی الدر المختار:176/1،کتاب النکاح، باب نکاح الرقیق،مطلب في حكم العزل،ط: دار الفکر- بیروت)
واللہ اعلم بالصواب
کتبہ محمد حماد فضل
نائب مفتی دارالافتا جامعہ طہ
18 نومبر 2018



Share:

Related Question:

Categeories