18-Feb-2020 /23- Jumādu-Thani-1441

Questions Under: ijaara


Q #
7271
Assalam alaikum Kia instalment pay chez lena jaiz ha??

Category: ijaara - Asked By: Ume AbduLLAH - Date: Jan 30, 2019













Q #
1371
#1371 Topic related to Ijaara. Subtopic related to services کتاب الاجارہ باب ما یتعلق بالخدمات Assalam u Alaikum! Hoping for the best from Allah for the whole Ummah. I am here to discuss and elaborate on our company’s earnings. We are running a software house where different services are available to clients. Since the category that is going to be more or less engaging depends on client traffic, our video editing team has gotten the fame and that’s the main reason behind our earnings. As we are worried about the earning that is either Halal or not, we are here. I will divide my question into two parts. 1) We are dealing with clients online through channels like Upwork, Fiverr, Freelancer etc. where the platform will charge the seller as well as the buyer for the work. For example: If me and my client agreed on a project worth Rs 100, these platforms will charge the client Rs 105 and will give me Rs 80, while they will keep the remaining Rs 25 for themselves as platform charges. So, is it Haram or Halal for us to use these platforms for earnings? 2) Our video editing services are getting famous in the following categories: • Product Ad videos • Gaming videos for YouTube • Adding subtitles to videos • Adding background music to videos • Singer video editing • Dancer video editing • Cartoon video creation • Nature video editing • Informative video editing If there is any chance of a Halal earning in the categories mentioned above, please let us know which one is Halal & which one is Haram, in details if possible, please. JazakALLAH Adnan Mahbob

Category: ijaara - Asked By: Adnan Mahboob - Date: Oct 08, 2019







Q #
1391
السلام علیکم ارباب علم ودانش! کیافرماتے ھیں مفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں درشریعت محمدی علی صاحبھا الصلاۃ والسلام کہ زیدصاحب نے بکرصاحب کو اپنی ایک قطعہ زمین شراکت کی بنیاد پردےدی کہ وہ اسکو ھموار کرےاور پلاٹنگ کرے,قیمت جو وصول ھوگی بکرکو40 فیصداور زیدکو60فیصدآپس میں تقسیم کرینگے,اس( ہمواری زمین کے) ضمن میں جوخرچہ ھوگا وہ سب بکر نے برداشت کرنا ھے, اب سوال یہ ھیکہ ہمواری زمین کے بعدوہ قیمت پلاٹ (100+100) سوبائ سوکی 4000 روپے,اور دکان کیلئے مختص جگہ کی قیمت 3000 روپےمقررکرینگے ,اب بکر صاحب حیلہ بہانہ سے 4000 والی پلاٹ کو8500 روپے میں اور 3000 والی کو( 10,000) دس ھزار میں فروخت کرتا ھےاور زید کو حساب4000 اور3000سے دینا چاھتا ھے, کیا بکر کیلئے ایسا کرنا جائزھوگا? جبکہ زیدکے منع کرنے کے باوجود بکر ڈیڈھ سال گزرنے کے باوجودکہتاھیکہ یہ سودا قرضہ دیکرکیاھے , لیکن حقیقتاً اس نے قرضہ پہ نھیں بلکہ کیش پر سودا کیا ھےاور کذب بیانی کا سہارالیتا ھے, دوسری طرف بکرصاحب کہتاہے کہ میں( بکر) نے ایک اور شخص( جمعہ صاحب) کو مقررہ قیمت یعنی 4000 یا3000 میں پلاٹ وغیرہ دیدیااور اسی وقت جمعہ صاحب سے واپس وہی پلاٹ یادکان 8000, اور9000 روپے میں خریدلیا ( یادرہے بکرکایہ لین دین زبانی کلامی پر مبنی ہے, نہ جمعہ کو زمین تصرف میں دی ھے اور نہ جمعہ نے قیمت کی ادائیگی کی ہے ) اب بکرصاحب وہی پلاٹ وغیرہ زیادہ قیمت میں فروخت کرتا ہے , یہ حیلہ بکرصاحب اسلیئے اختیار کرتاھےتاکہ وہ خود مالک بن کرخرید وفروخت کرے اور زید کےساتھ 60 ا ور40 فیصد کے حساب سے تقسیم کی نوبت نہ آئے , کیا بکرصاحب کا زیدصاحب کے ساتھ یہ معاملہ دیانت پر مبنی ھے ??اور شریعت میں اسکا کیا حکم ھے ?? نیز بکرکاجمعہ صاحب کے ساتھ مذکورہ صورت میں لین دین جائز ھے? زیداوربکر کے معاملے کوشریعت کی روسے جائز صورت کی وضاحت فرمائیں . فاروق راھی ۔

Category: ijaara - Asked By: فاروق راہی - Date: Jan 13, 2020



Categeories