03-Jul-2020 /12- Dhū al-Qa‘dah-1441

Questions Under: divorce


Q #
8008
کیا فرماتے ھیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں ۔ بندہ نے2014 میں گھریلو نا چاقی کے باعث اپنی بیوی کے مطالبے پر محض اس کو ڈرانے کے لئے ایک اشٹام فروش کے پاس گیا اور اس کو کہا کہ طلاق نامہ لکھ کر دے دو۔اس نے مجھ سے کوائف پوچھے اور درج ذیل طلاق نامہ پکڑا دیا جس پر میں نے دستخط نہیں کئے ۔جس وقت اس کو کہا کہ طلاق نامہ دے دو تو یہی ارادہ تھا کہ دستخط نہیں کروں گا اور اس وقت دستخط نہیں کئے البتہ بیگم کو لا کر دکھا دئے کہ یہ کاغذات تیار کروا لایا ھو۔مجھے یہ بات بتا تھی کہ طلاق تب واقع ھوتی ھے جب دستخط کئے جائیں۔یہ بات ملحوظ رھے کہ یہ الفاظ میں نے نہیں لکھوائے بلکہ کاتب نے ازخود لکھا ھوا ایک مخصوص فارمیٹ ھاتھ سے لکھ کر دے دیا۔اس اشٹام کی عبارت درج ذیل تھی۔میں نے اس اشٹام پر 3 اکتوبر 2019 کو دستخط کئے دستخط سے پہلے طلاق کے ساتھ لکھا ھوا ثلاثہ کا لفظ کاٹ دیا ۔پھر دستخط کئے تاکہ ایک طلاق پڑے ۔البتہ عنوان سے کاٹنا رہ گیا۔ اس صورت حال میں بتائے کہ کتنی طلاق واقع ھوئی ۔نیز رجوع کیسے کیا جائے گا۔ دستاویز طلاق نامہ ثلاثہ بحق:۔ زینت بی بی دختر محمد یونس خان ساکن مکان نمبرH.55/13ایف سی ایریا کراچی سکنہ عبدالباسط ولد عبدالقیوم ساکن مکان نمبر431محلہ توحید پارک گلشن راوی بلاکBلاہور کا رہائشی ہوں ۔یہ کہ من مقراقرار کرکے لکھ دیتا ہوں کہ من مقرکی شادی ہمراہ مسمات زینت بی بی دختر محمد یونس خان ساکن مکان نمبرH.55/13ایف سی ایریاکراچی سے بالعوض حق مہرشرعی مورخہ24:04:1994کو بمطابق شریعت محمدیﷺ سر انجام پائی ۔اسی ازواج کے نتیجہ میں من مقرکے نطفے سے اور زینت بی بی کے بطن سے آٹھ بچے پیدا ہوئے ۔جو کہ بقید حیات ھیں ۔یہ کہ اب من مقر نےبقائمی ہوش وحواس خمسہ بلا جبر واکراہ وترغیب غیر کے زینت بی بی کے مصمم مطالبہ پر۔۔۔۔۔۔۔ ثلاثہ دیتاہوں طلاق ۔۔۔۔دیتا ھوں۔ ،درحقیقت زینت بی بی بڑی بدتمیز اور گستاخ زبان ہوچکی ہے۔جس کی وجہ سے فریقین کا اکھٹے رہ کر حدوداللہ میں زندگی گزارنا مشکل ہے۔یہ کہ اب اور آج سے من مقرنے زینت بی بی کو اپنے نطفہ پر حرام قرار دیتا ہوں ،یہ کہ بعد از عدت زینت بی بی جہاں چاہئے اپنی مرضی سے عقد ثانی کر سکتی ہے ۔جس پر من مقر کو کوئی عذر واعتراض نہ ہے اور نہ ہی آئندہ کبھی ہوگا۔یہ کہ طلا ق نامہ لکھ دیا ہے تاکہ سند رہے ۔اور بوقت ضرورت کام آسکے۔ مرقوم 03/7/2014 العبد عبدالباسط 35202.4432301.1

Category: divorce - Asked By: عبدالباسط - Date: Dec 05, 2019





Q #
8008
کیا فرماتے ھیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں ۔ بندہ نے2014 میں گھریلو نا چاقی کے باعث اپنی بیوی کے مطالبے پر محض اس کو ڈرانے کے لئے ایک اشٹام فروش کے پاس گیا اور اس کو کہا کہ طلاق نامہ لکھ کر دے دو۔اس نے مجھ سے کوائف پوچھے اور درج ذیل طلاق نامہ پکڑا دیا جس پر میں نے دستخط نہیں کئے ۔جس وقت اس کو کہا کہ طلاق نامہ دے دو تو یہی ارادہ تھا کہ دستخط نہیں کروں گا اور اس وقت دستخط نہیں کئے البتہ بیگم کو لا کر دکھا دئے کہ یہ کاغذات تیار کروا لایا ھو۔مجھے یہ بات بتا تھی کہ طلاق تب واقع ھوتی ھے جب دستخط کئے جائیں۔یہ بات ملحوظ رھے کہ یہ الفاظ میں نے نہیں لکھوائے بلکہ کاتب نے ازخود لکھا ھوا ایک مخصوص فارمیٹ ھاتھ سے لکھ کر دے دیا۔اس اشٹام کی عبارت درج ذیل تھی۔میں نے اس اشٹام پر 3 اکتوبر 2019 کو دستخط کئے دستخط سے پہلے طلاق کے ساتھ لکھا ھوا ثلاثہ کا لفظ کاٹ دیا ۔پھر دستخط کئے تاکہ ایک طلاق پڑے ۔البتہ عنوان سے کاٹنا رہ گیا۔ اس صورت حال میں بتائے کہ کتنی طلاق واقع ھوئی ۔نیز رجوع کیسے کیا جائے گا۔ دستاویز طلاق نامہ ثلاثہ بحق:۔ زینت بی بی دختر محمد یونس خان ساکن مکان نمبرH.55/13ایف سی ایریا کراچی سکنہ عبدالباسط ولد عبدالقیوم ساکن مکان نمبر431محلہ توحید پارک گلشن راوی بلاکBلاہور کا رہائشی ہوں ۔یہ کہ من مقراقرار کرکے لکھ دیتا ہوں کہ من مقرکی شادی ہمراہ مسمات زینت بی بی دختر محمد یونس خان ساکن مکان نمبرH.55/13ایف سی ایریاکراچی سے بالعوض حق مہرشرعی مورخہ24:04:1994کو بمطابق شریعت محمدیﷺ سر انجام پائی ۔اسی ازواج کے نتیجہ میں من مقرکے نطفے سے اور زینت بی بی کے بطن سے آٹھ بچے پیدا ہوئے ۔جو کہ بقید حیات ھیں ۔یہ کہ اب من مقر نےبقائمی ہوش وحواس خمسہ بلا جبر واکراہ وترغیب غیر کے زینت بی بی کے مصمم مطالبہ پر۔۔۔۔۔۔۔ ثلاثہ دیتاہوں طلاق ۔۔۔۔دیتا ھوں۔ ،درحقیقت زینت بی بی بڑی بدتمیز اور گستاخ زبان ہوچکی ہے۔جس کی وجہ سے فریقین کا اکھٹے رہ کر حدوداللہ میں زندگی گزارنا مشکل ہے۔یہ کہ اب اور آج سے من مقرنے زینت بی بی کو اپنے نطفہ پر حرام قرار دیتا ہوں ،یہ کہ بعد از عدت زینت بی بی جہاں چاہئے اپنی مرضی سے عقد ثانی کر سکتی ہے ۔جس پر من مقر کو کوئی عذر واعتراض نہ ہے اور نہ ہی آئندہ کبھی ہوگا۔یہ کہ طلا ق نامہ لکھ دیا ہے تاکہ سند رہے ۔اور بوقت ضرورت کام آسکے۔ مرقوم 03/7/2014 العبد عبدالباسط 35202.4432301.1

Category: divorce - Asked By: عبدالباسط - Date: Nov 12, 2019





Q #
7233
Assalam u alaikum Agar mard ny bivi ko 2 talakien Dy dien Aur phir 5 saal guzar gay uss ny bivi ko teesri talak nahi di ....tu Kya 5 saal baad uss sy rajo kiya ja sakta hie?

Category: divorce / Nikah and Weddings (كتاب النكاح والزواج) - Asked By: بنت مبشر - Date: Jun 23, 2018





Categeories